جشنِ زریں تقریبات سلسلے کے تحت اسلافِ مرکز کو کیا گیا یاد

June 23, 2022
جشنِ زریں تقریبات سلسلے کے تحت اسلافِ مرکز کو کیا گیا یاد

ادبی مرکز کمراز کی تقریب میں سابق اور موجود عہدہ دار ” ورقِ زریں “ سے مشرف

۸۱جون ۲۲۰۲ئ
بارہمولہ

رپورٹ: جمیل انصاری۔آج ادبی مرکز کمراز جموں و کشمیر کے صدر دفتر واقع کانسپورہ بارہمولہ میں گولڈن جوبلی تقریبات کے سلسلے میں ” یومِ اسلاف“ منایا گیا۔تقریب کی صدارت معروف ادیب اور مرکزِ نُور شیخ العالمؒ چیئر کے سابق پروفیسر بشر بشیر نے کی، جبکہ ڈی ڈی چیئرپرسن بارہمولہ محترمہ سفینہ بیگ مہمانِ خصوصی کی حیثےت سے تقریب پر موجود تھیں۔ ایوانِ صدارت میں ادبی مرکز کمراز کے صدر محمد امین بٹ، ادیب اور شاعر فیاض تلگامی، قانون دان شبیر عارض اور مرکز کے جنرل سیکریٹری شبنم تلگامی بھی موجود تھے۔ تقریب کا آغاز تلاوتِ کلامِ پاک سے ہوا جسکی سعادت مرکز کے نائب صدر دوم جاوید اقبال ماوری کو حاصل ہوئی، جبکہ نعتِ نبی صلعم ساگر سرفراز نے پیش کی۔اس موقعے پر معروف قلمکارسید سعد الدین سعدی ادبی مرکز سے وابستہ اُن شخصےات کے حق میں دعائے مغفرت اور فاتحہ خوانی کی جو اس دنیا سے رحلت کرچکے ہیں۔ اپنے خطبہ استقبالیہ میں صدرِ ادبی مرکز کمراز محمد امین بٹ نے مہمانوں کا استقبال کرنے کے ساتھ ساتھ جشنِ زریں تقریبات کا ذکر کرتے ہوئے گولڈن جوبلی کانفرنس کا اعلان کیا ۔ انہوں ادبی مرکز سے وابستہ اسلاف کویاد کرتے ہوئے انہیں خراجِ عقیدت پیش کیا۔محمد امین بٹ نے مزید کہا کہ ادبی مرکز کمراز کے پچاس سال مکمل ہونے کی خوشی کے ساتھ ساتھ موجود قیادت کو اس بات کا پورا احساس ہے کہ کشمیری زبان و ادب کو درپیش چلینجوں کا مقابلہ کرنے کے لئے تمام ادیبوں، شاعروں، قلمکاروں، دانشوروں اور زبان کے دیگر خیر خواہوں کو بلالحاظِ رنگ و نسل ایک جُٹ ہونے کی ضرورت ہے اور کشمیری زبان کو ہر سطح پر تحفظ فراہم کرنا ہمارا اولین فرض ہے۔انہوں نے کمراز کے سابق عہدہ داروں اور وادی بھر سے آئے ہوئے دیگر مہمانوں کا استقبال کرنے کے دوران مرکز کے سابق عہدہ داروں کی اُن کاوشوں کی کافی سراہنا کی جو انہوں نے مرکز کو فعال بنانے کے دوران انجام دیں۔ تقریب پر مرکز کے سابق جنرل سیکریٹری عبدالخالق شمس نے ” ادبی مرکز کمراز کے اسلاف“ عنوان کے تحت ایک مقالہ پیش کیا،جس پر سیر حاصل بحث ہوئی۔مقالے پر بحث کرتے ہوئے ڈاکٹر رفیق مسعودی، شہناز رشید، ڈاکٹر ریاض الحسن،شاکر شفیع، میر طارق، نذیر ابنِ شہباز نے اپنے تاثرات پیش کئے۔ جناب شبیر عارض نے مرکز کے ساتھ اپنی وابستگی کا ذکر کرتے ہوئے اسے تاریخ ساز تنظیم قرار دیا۔ صدرِ تقریب پروفیسر بشر بشیر نے ادبی مرکز کمراز کے زعماءکو مبارک باد پیش کرتے ہوئے ان کی کاوشوں کی سراہنا کی۔انہوں نے کہا کہ یہ ادارہ ہماری شان ہے اور کشمیری زبان و ادب کی خدمت کے تئیں اسے فراموش نہیں کیا جائے گا۔تقریب پر موجود مہمانِ خصوصی محترمہ سفینہ بیگ نے ادبی مرکزکمراز اور دیگر قلمکاروں کو یقین دلایا کہ کشمیری زبان و ادب کی ترقی و ترویج کے لےے وہ ہرممکن امداد فراہم کرنے کو تیار ہے۔اس دوران معروف قلمکار فیاض تلگامی نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آج کی تقریب سے اُنہیں اس بات کا احساس ہورہا ہے کہ مرکز محفوظ ہاتھوں میں ہے۔ تقریب پر مرکز کی جانب سے تمام سابقہ عہدہ داروں کو مرکز کے تئیں اُن کی بے لوث خدمات کے کے صلے میں اُنہیں ” ورقِ زریں “سے نوازا گیا۔ جو سابقہ عہدہ دار اس دنیا سے کوچ کرگئے ہیں ، اُن کے وارثین میں بھی ” ورقِ زریں“ پیش کرکے اُنہیں عزت افزائی کی گئی۔تقریب پر مہمانِ خصوصی محترمہ سفینہ بیگ کو بھی اعزاز سے نوازا گیا۔ادبی مرکز کمراز کی جانب سے جن مرحومینسابقہ عہدہ داروں اور سرپرستوں کے وُرثا اور نمائندگان کو ”وررقِ زریں“پیش کیا گیا اُن میںپروفیسر محی الدین حاجنی، پروفیسر رشید نازکی، پروفیسر مشعل سلطانپوری،نشاط انصاری، منظور ہاشمی، محی الدین گوہر، علی محمد شہباز، محی الدین گوہر، غلام محمد غمگین، طٰحہٰ نازکی، محمد احسن احسن،ڈاکٹر عزیز حاجنی، ڈاکٹر سید شجاعت بخاری، محترمہ عتیقہ بانو(بہن جی)،محمد امین شکیب، قلبِ حُسین شالہاری قابلِ ذکر ہیں۔ اس کے علاوہ مرکز کے پچھلے ۰۵سالہ تاریخ کے دوران جن اصحاب نے مختلف ادوار میں مرکز کے عہدے داروں کی حیثےت سے اپنی خدمات انجام دیں اور جن میں سے کچھ اس وقت بھی اپنی ذمہ داریاں نبھارہے ہیں اُن میں عبدالغنی بیگ اطہر،سید سعدالدین سعدی، عبدالاحد حاجنی، ڈاکٹر رفیق مسعودی، فیاض تلگامی، شوکت انصاری، شہناز رشید، گلشن بدرنی، ضمیر انصاری،سید عبدالرشید جوہر، عبدالخالق شمس، جی این شاکر،میر طارق رسول، پرویز مجید،عادل اسماعیل، خورشید قریشی،محمد امین بٹ، سید اختر حسین منصور، جاوید اقبال ماوری، شبنم تلگامی،فاروق شاہین، جمیل انصاری، مجید مجازی،ظہور ہائیگامی قابلِ ذکر ہیں۔ تقریب پر ادبی مرکز کمراز کے جملہ اراکین و ممبران کے علاوہ جو دیگر شخصیات موجود تھیں، اُن میں شہناز رشید، گلشن بدرنی، نذیر ابنِ شہباز،شوکت انصاری، ڈاکٹر رفیق مسعودی، عبدالغنی بیگ اطہر قابلِ ذکر ہیں۔ تقریب کی نظامت کے فرائض مرکز کے جنرل سیکریٹری شبنم تلگامی نے انجام دئے جبکہ نائب صدرِ اول سید اختر حسین منصور نے شکریہ کی تحریک پیش کی۔

Related articles